[vc_row full_width=”stretch_row” content_placement=”middle” el_id=”row-rtl”][vc_column][vc_column_text]

آنکھوں کی حَسّاسِیّت

یہ آنکھوں کی بہت عام تکلیف ہے۔ اور چونکہ اِس کا علاج لمبا ہوتا ہے اور پھر بھی زیادہ تر بیماری صرف کنٹرول میں ہی آتی ہے بالکل صحیح نہیں ہو پاتی اِس لئے عموماً علاج نامکمل کیا جاتا ہے اور مریض بہت زیادہ پیسے ضائع کرتے ہیں اور بہت سارے لوگ جھوٹی اُمیدیں دلا دلا کر علاج کے بہانے لوٹتے بھی ہیں۔ اِس لئے اِس کے بارے میں بنیادی معلومات کا جاننا بہت ضروری ہے۔

الرجی کیوں ہو جاتی ہیں؟ جسم میں کہاں نقص پیدا ہو جاتا ہے؟

الرجی اصل میں جسم میں پائی جانے والی ایک کمزوری ہے۔ جس کی وجہ سے بعض چیزوں کو جسم برداشت نہیں کر پاتا۔ جونہی اُن چیزوں سے واسطہ پڑتا ہے جسم میں کچھ زہر پیدا ہونا شروع ہو جاتے ہیں۔ یہ زہر جسم کو نقصان پہچانا شروع کر دیتے ہیں۔ یہ زہریلے مادے جسم کے اپنے ہی بنائے ہوئے ہوتے ہیں اور زیادہ تر وہ ہوتے ہیں جو بنیادی طور پر جسم کے دفاع کے لئے استعمال ہوتے ہیں لیکن زہر بن جاتے ہیں۔

وہ مختلف اشیاء جن کو جسم برداشت نہیں کرتا اور جن کے خلاف زہریلے مادے پیدا کرنا شروع کر دیتا ہے اُنہیں الرجن کہتے ہیں۔ عموماً تو یہ جسم کے باہر سے آتے ہیں اور جب جسم کا اِن سے تعامل ہو تب علامات پیدا ہوتی ہیں لیکن کئی لوگوں کے جسم کے اندر الرجن مستقل موجود ہوتے ہیں مثلاً جسم میں کسی جگہ پر موجود ٹی بی کے جراثیم یا مسلسل گلا خراب رہے تو گلے کے غدود میں موجود جراثیم وغیرہ اور چونکہ یہ الرجن جسم میں مستقل موجود رہتے ہیں اس لئے الرجی والے زہریلے مادے مسلسل پیدا ہوتے رہتے ہیں۔

اِن زہریلے مادوں کا اصل کام تو جراثیموں کو مارنا ہے لیکن یہ اپنے ہی جسم کے کسی حصّے کو جراثیم سمجھ کر اُسے نقصان پہچانا شروع کر دیتے ہیں جس کے نتیجے میں الرجی اور Autoimmunity کی علامات پیدا ہوتی ہیں۔

کیا الرجی کی کوئی قسمیں بھی ہوتی ہیں؟

آنکھوں کی الرجی کی سب سے زیادہ درجِ ذیل قسمیں پائی جاتی ہیں:

1۔ Conjunctival Allergy

2. Uveitis

کی الرجی Conjunctiva

Conjunctiva کی الرجی درج ذیل قسمیں زیادہ عام ہیں: 

Seasonal Allergic Conjuctivitis SAC

 یہ الرجی کی وہ قسم ہے جس کی علامات مخصوص موسموں میں ظاہر ہوتی ہیں۔

Perrenial Allergic Conjuctivitis PAC

یہ الرجی کی وہ قسم ہے جس کی علامات سارا سال موجود رہتی ہیں۔

اِن دونوں میں بنیادی فرق الرجن کا ہوتا ہے ورنہ علامات تقریباً ایک جیسی ہی ہوتی ہیں۔ بلکہ سارا سال رہنے والی الرجی کی علامات کی شدت میں دوروں کی شکل میں اضافہ ہوتا ہے جس سے اِن دونوں قسموں میں فرق کرنا مشکل ہو جاتا ہے۔

Vernal Keratoconjuctivitis VKC

الر جی کی قسم بچوں میں کافی عام ہے۔ اِس کے مناسب نہ کرنے علاج اور اِس کو کنٹرول نہ کرنے کے باعث بہت سارے بچے مستقل اذیت میں مبتلا رہتے ہیں اور ایک معتدبہ تعداد کی ایک یا دونوں آنکھوں کی نظر قرنیہ خراب ہو جانے سے مستقل طور خراب ہو جاتی ہے۔

Atopic Keratoconjuctivitis ATC

الر جی کی قسم بڑی عمر کے لوگوں میں ہوتی ہے۔ اِس کے مناسب نہ کرنے علاج اور اِس کو کنٹرول نہ کرنے کے باعث بہت سے لوگ مستقل اذیت میں مبتلا رہتے ہیں اور کئی افراد کی ایک یا دونوں آنکھوں کی نظر قرنیہ خراب ہو جانے سے مستقل طور خراب ہو جاتی ہے۔

Contact Allergy

یہ عورتوں میں زیادہ ہوتی ہے اور اِس کی اہم وجہ زیبائیش کے لئے استعمال ہونے والی مختلف اشیاء ہیں۔ اس کے علاوہ کچھ ایسے پیشوں کے لوگ بھی اس میں مبتلا ہو سکتے ہیں جن میں مختلف قسم کے کیمیکل استعال کئے جاتے ہیں۔

Giant Papillary Conjuctivitis

یہ زیادہ تر کنٹیکٹ لینز استعمال کرنے والے لوگوں میں زیادہ پائی جاتی ہے۔ اس کے علاوہ اُن لوگوں میں بھی الرجی کی یہ قسم دیکھی جاتی ہے جو مصنوعی آنکھ استعمال کرتے ہوں یا ایسے لوگ جن کے اپریشن کے کافی عرصہ بعد بھی ٹانکے نہ نکالے گئے ہوں۔

یہ خردبینی کیڑا بہت سارے لوگوں میں الرجی کی وجہ ہوتا ہے۔ خصوصا قالین والی جگہوں پر

Uveitis

الرجی کی یہ قسم آنکھ کے جن حصوں کو متاثر کرتی ہے وہ درج ذیل ہیں:

1۔ Iris

2. Ciliary Body

3. Choroid

یہ دراصل Autoimmunity کی قسم ہے۔ یعنی اپنے جسم کے مختلف حصوں کے خلاف مدافعتی عمل کا شروع ہو جانا۔

[/vc_column_text][/vc_column][/vc_row]

کوئی تبصرہ نہیں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *